خاتون صحافی قتل، شوہر پر قتل کا الزام

لاہور کے علاقے میں ایک خاتون صحافی کو ان کے دفتر کے باہر گولیاں مار کر قتل کر دیا گیا۔ یہ واقع پیر کے روز تھانہ قلا گجر سنگھ کے علاقے میں پیش آیا۔مقتول خاتون صحافی کا نام عروج تھا، اور عمر ستائیس برس تھی۔ وہ ایک نجی اخبار میں کام کر رہی تھی۔ دفتر کے باہر عروج پر قاتلانہ حملا ہوا۔ عروج کے سر پر گولیاں لگیں جس سے وہ فوراً جاں بحق ہو گئی۔

پولیس نے عروج کے بھائی کی شکایت پر اس کے شوہر دلاور علی کے خلاف قتل کا مقدمہ درج کیا۔ عروج کے شوہر دلاور بھی ایک صحافی تھے اور ایک اخبار میں کام کر رہے تھے۔ عروج کے بھائی یاسر اقبال نے پولیس کو بتایا کہ عروج نے سات ماہ قبل دلاور سے پسند کی شادی کی تھی۔ کچھ عرصے بعد ان کے رشتہ میں اختلافات پیدا ہوئے اور گھریلو معاملات پر جگھڑے بھی ہوتے رہے۔ دلاور چھوٹی چھوٹی بات پر عروج پر تشدد کرتا تھا۔ مقتولہ کے بھائی نے یہ بھی بتایا کہ وہ شاید عروج کو نوکری کرنے سے منع  کر رہا تھا۔

یاسر نے مزید بتایا کہ حال ہی میں اس کی بہن عروج نے اپنے شوہر دلاور کے خلاف تشدد کرنے پر پولیس میں کیس بھی درج کروایا تھا۔ مگر گھر کے بڑوں نے کیس ختم کروا کر معاملے کو حل کر دیا تھا، تب سے دلاور کے دل میں عروج کے خلاف بغض تھا۔یاسر نے پولیس کو بتایا کہ چند روز قبل اس کی بہن نے اس کو فون کیا اور بتایا کہ دلاور اس کو جان سے مارنے کی دھمکیاں دے رہا ہے۔ چند روز بعد ہی اس کے پاس کال آئی کہ ان کی بہن کو گولیاں مار کر قتل کر دیا گیا ہے۔

ذرائع کے مطابق عروج دفتر کے قریب اسی عمارت کے ایک کمرے میں رہائش پزیر تھیں۔ پولیس نے عمارت میں لگی سی سی ٹی وی فوٹیج حاصل کر لی اور اس کا معائنہ کرانے کے لئے فرانزک ٹیم کے پاس بھیج دیا ہے۔ قریبی عمارت میں رہنے والے لوگوں میں سے کسی نے ملزم کو نہیں دیکھا۔ ایس پی پولیس نے ملزم کی گرفتاری کے لئے ٹیم بھیج دی ہے۔ پولیس نے یہ یقین دہانی کروائی ہے کہ ملزم کو جلد پکڑا جائے گا اور سخت کاروائی کی جائے گی۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

WhatsApp WhatsApp us