ٹینس کے بھی دن سنور گئے؟

تیزی سے ترقی کرتے اس دور میں جہاں ٹیکنالوجی کو فروغ مل رہا ہے اور زندگی آسان ہورہی ہے وہیں بچے بھی اس کا تیزی سے حصہ بن رہے ہیں۔ آج کل کے بچوں کی دنیا اسمارٹ فونز، ٹیبلٹس اور ویڈیو گیمز کے گرد گھومتی ہے جس سے انکی صحت دن بہ دن خراب ہوتی ہے اور وہ ذہنی اور جسمانی تھکاوٹ کا شکار رہتے ہیں جبکہ پہلے کے بچے گلی محلوں میں مختلف کھیل کھیلا کرتے تھے جس سے وہ جسمانی طور پر صحت مند رہتے تھے اورانکی نشونما صحیح طریقے سے ہوتی تھی۔

اسی بات کو مد نظر رکھتے ہوئے ڈاکٹر فرحان عیسی نے بچوں میں ٹینس کے کھیل کے فروغ دینے کیلئے قدم اٹھایا اور چیمپئن شپ کا انعقاد کیا۔

Image may contain: 6 people, people smiling, people sitting

شرکاء کا کہنا تھا کہ ٹینس ایک ایسا کھیل ہے جسے ہر عمر کے لوگ کھیل سکتے ہیں۔ اور یہ جسمانی ورزش کا بہترین ذریعہ ہے اس سے انسان فٹ رہتا ہے۔ چیمپئن شپ میں حصہ لینے والے بچوں کے والدین کا کہنا تھا انکے بچے اس کھیل کا حصہ بنے ہیں انہیں اس بات کی خوشی ہے کہ وہ تمام ٖفضولیات سے دور رہ کر اپنا وقت اچھے کام میں لگا رہے ہیں۔

پاکستان میں کھیلوں کے فروغ کیلئے حکومت کواقدامات کرنے کو تیار نہیں یہی وجہ ہے کہ بہت سے ٹیلینٹڈ بچے آگے آنے سے رہ جاتے ہیں۔ کھیلوں کے فروغ کیلئے حکومتی سظح پر پلاننگ کی ضرورت ہے۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

WhatsApp WhatsApp us