مہنگائی کے خلاف ایم پی اے میدان میں!

سندھ اسمبلی میں پیش اشیائے خوردونوش کی قیمتوں کے حوالے سے ایم پی اے ارسلان تاج گھمن کا طنزیہ سوال کہ ہمیں تو معلوم ہی نہیں تھا قیمتوں کا کنٹرول کا ادارہ بھی وزیراعلی سندھ مراد علی شاہ  کے ماتحت ہے۔ ارسلان تاج کا کہنا تھا کہ سبزی منڈی میں دھنیا تین روپے پر دستیاب ہے مگر بازاروں میں بیس روپے، کوئی نہ اس بارے میں پوچھنے والا ہے اور نہ ہی روکنے والا۔

مزید بات کرتے ہوئے ارسلان تاج نے کہا کہ اگر پرائس کنٹرول کا ادارہ صحیح کام نہیں کر سکتا تو بند کر دیا جائے، یا کسی اور کو سونپ دیا جائے کیونکہ کمشنر اور دیگر سرکاری ادارے پرائس کنٹرول کرنے میں بری طرح ناکام ہیں۔

مثال اگر صرف دودھ کی قیمت کی ہی کی جائے توعدالت کے 94 روپے طے کرنے کے باوجود آج بھی ۱۱۰ میں بیچا جارہا ہے جو کے کھلی لاقانونیت ہے۔ اور تو اور اس کو دیکھ سن کر بھی مب انجان بنے ہوئے ہیں۔

سندھ حکومت قیمتوں کو کنٹرول نہ کر کے مافیا کا ساتھ دے رہی ہے، اور یہ بات قبول نہ کر کے بھی نقصان دے رہی ہے عوام کو اور عوام بیچاری پس رہی ہے جو وہ آج تک ہوتی آئی ہے۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

WhatsApp WhatsApp us