بھارت کے حوالے سے اہم فیصلے

بھارتی حکومت کی جانب سے کیے گئے غیر قانونی اقدامات کے بعد قومی سلامتی کونسل کے اجلاس میں فیصلہ کیا گیا ہے کہ بھارت کے ساتھ دوطرفہ تجارت کو معطل کردیا جائے گا اور سفارتی تعلقات کو محدود کر دیاجائے گا۔ مگر اس عمل کے بعد کیا بھارتی حکومت پریشر میں آجائے گی یا وہ اپنا غیر قانونی فیصلہ واپس لے لے گی؟ اگر نہیں تو اس فیصلے کا کیا فائدہ۔

اس کے علاوہ پاکستان نے فیصلہ کیا ہے کہ بھارت کے غیر قانونی عمل کو بین الاقوامی سطح پر بھی اٹھایا جائے گا۔ پر یہ تو پچھلے ستر سال سے کیا جا رہا ہے کیا۔ کیا اس بار پاکستان اقوامِِ متحدہ میں بھارت کو شکست دینے میں کامیاب ہو جائے گا؟

قومی سیاسی اور عسکری قیادت نے فیصلہ کیا ہے کہ یوم آزادی کو کشمیریوں کے ساتھ یوم یک جہتی کے طور پر منایا جائے گا اور مسئلہ کشمیر کو بھرپور انداز میں اجاگر کرتے ہوئے 15 اگست کو یوم سیاہ منایا جائے گا۔ مگر کیا یہ دن بھی ہر سال ۵ فروری کی ظرح منایا جائے گا یا اس فیصلے سے کوئی ٹھوس تبدیلی بھی آئے گی۔ پاکستان ہمیشہ سے مسئلہ کشمیر کے حوالے سے معمولی فیصلے کرتا ہے جس سے بھارت کو کوئی خاص فرق نہیں پڑھتا۔

اس وقت کشمیر کے مسلمان بے یار و مددگار اپنی ہی جنت میں جل رہے ہیں۔ وہ سالوں سے غلامی کی زنجیروں میں جکڑے ہیں۔  آج تک دنیا نے ان کے حال پر توجہ نہیں دی۔ ہر بار کشمیر جلتا ہے اس ملک میں دو دن شور ہوتا ہے، پھر سب خاموش ہو جاتے ہیں۔ اس بار بھارت نے کشمیر کی ڈیموگرافی تبدیل کرنے کے لئے ایک بہت بڑا جال رچایا ہے، جس سے  برِ صغیر میں اب امن قائم ہونا مشکل ہو گیا ہے۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

WhatsApp WhatsApp us