فواد چودھری، ٹھیکوں کا چاند

فواد چودھری نے رمضان، عیدالفطر اور عیدالضحی کے چاند دیکھنے کی باتیں تو بہت کیں اور یہ سارے چاند انہیں نظر بھی آگئے مگر وفاقی وزیر سائنس اینڈ ٹیکنالوجی نے محرم کے چاند کے حوالے سے کوئی بات نہیں کیونکہ وہ بلدیہ کی دکانوں کے ٹھیکوں پرلین دین کے معاملات طے کرنے میں مصروف ہیں۔

حال ہی میں فواد چودھری کی ایک ویڈیو وائرل ہوئی جس میں وہ  دکانوں کے ٹھیکے دینے کے لیے 6 کروڑ مانگ رہے ہیں اور کہہ رہے ہیں کہ اب وقت بدل گیا ہے۔ مشرف کے دور میں 70 لاکھ تھے اب 6 کروڑ دینے پڑیں گے ورنہ میرٹ پر انتظار کرتے رہو۔

فواد چودھری اپنے پارٹی لیڈر کی طرح اپنی ہی باتوں کی نفی کرنے لگے۔ ماضی میں دوسروں پر کرپشن اور لین دین کے الزامات لگانے والے فواد چوہدری خود بھی وہ کام کرنے میں مصروف ہیں۔

فواد چودھری نے اپنے ایک بیان میں کہا تھا کہ احتساب نیب نہیں ہم کر رہے ہیں جس پر بعد میں قومی احتساب بیورو نے نوٹس بھی لیا اور جواب میں کہا کہ وفاقی وزیر کا یہ بیان حقائق کے منافی ہے۔ جس سے نیب کا تشخص مجروع ہوا ہے۔

تحریک انصاف کی حکومت آتے ہی امید ضرور تھی کہ کچھ بہتر ہوگا مگر ایک سال مکمل کرنے کے بعد اب عوام کی امیدیں دم توڑنے لگیں ہیں۔ مہنگائی مسلسل بڑھ رہی ہے۔ غریب کے لیے روزانہ کا خرچہ اٹھانا بھی مشکل ہوگیا ہے۔

کیا پاکستان مسلم لیگ ن کے لگائے الزامات درست ہیں کہ احتساب بلاامتیاز نہیں ہورہا؟ کیونکہ اگر پی ٹی آئی کے وزرا کرپشن میں ملوث ہیں تو انکا احتساب بھی ہونا چاہیے۔

 

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

WhatsApp WhatsApp us