ڈاکٹرز کی غفلت کا ایک اور واقعہ

گورنمنٹ علامہ اقبال میموریل ٹیچنگ ہسپتال میں جنگل کا قانون ڈاکٹروں کی مبینہ غفلت نے پسرور کی رہائشی اٹھائس سالہ زاہدہ بی بی کی جان کے لی مریضہ پیٹ میں رسولی کے عارضے میں مبتلا تھی چار ماہ سے ہسپتال کے چکر لگانے کے باوجود ڈاکٹروں نے آپریشن نہ کیا جس کے باعث آج وہ زندگی کی بازی ہار گئی ، ورثا نے ڈاکٹروں کی مبینہ غفلت پر نعش ہسپتال کے باہر رکھ کر احتجاجی مظاہرہ کیا اور ڈاکٹروں کے خلاف نعرے بازی کرتے ہوئی اعلی حکام سے کاروائی کا مطالبہ کیا ورثا کا کہنا ہے کہ تشویش ناک حالت کے باوجود بھی بے حس ڈاکٹروں نے آپریشن نہ کیا ۔ ہسپتال میں ینگ ڈاکٹروں نے جنگل کا قانون نافذ کر رکھا ہے گزشتہ روز مریض کے لواحقین پر ڈاکٹروں نے تشدد کیا تھا
کچھ عرصہ قبل بھی ڈاکٹروں کی مبینہ غفلت سے ایک بچہ جاں بحق ہوا تھا اور اسکے ورثا کی جانب سے احتجاج پر ڈاکٹرز نے خودساختہ زخم لگا کر جاں بحق بچے کے ورثا پر مقدمہ درج کروایا تھا۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

WhatsApp WhatsApp us