موٹر نہ چلانے پر، باپ کا بیٹی پر تشدد

پنجاب کے شہر لاہور کے علاقے گلبرگ میں ایک بے حس باپ نے معمولی سی بات پر اپنی بیٹی کو موت کے گھاٹ اتار دیا۔ تفصیلات کے مطابق، باپ نے بیٹی کو موٹر چلانے کا کہا تھا جس پر بچی نے انکار کیا۔ ببیٹی کے انکار کرنے پر باپ نے اس کو تشدد کا نشانہ بنایا۔ تشدد کے دوران لڑکی کے بھائی نے اس کی ویڈیو بنائی اور اس کو سوشل میڈیا پر وائرل کردیا۔ باپ کے تشدد کا نشانہ بننے والی لڑکی کی عمر بیس سال تھی۔ باپ نے اپنی نوجوان بیٹی پر ہاتھ اٹھایا۔

دنیا کا بنائی دین کوئی قانون اس چیز کی اجازت نہیں دیتا۔ دینِ اسلام جیسے مذہب سے تعلق رکھ کر اگر والدین نوجوان بیٹیوں کا ساتھ جانوروں جیسا سلوک کریں تو وہ اس دین پر کالا دھبا ہیں۔ ویڈیو وائرل ہونے کے بعد پولیس نے اس واقع کا نوٹس لیا۔ بعد ازاں لڑکی نمرہ خان نے گذارش کی کہ اس کو تحفظ فراہم کیا جائے

نمرہ نے بتایا کہ اس کے والد اس کے بہن بھائیوں کو بھی مار پیٹ کا نشانہ بناتے رہے ہیں۔ وہ اب اس ماحول سے آزادی چاہ رہی ہے۔  پولیس حکام نے اے ایس پی گلبرگ کو واقعہ کی تحقیقات کا حکم دے دیا۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

WhatsApp WhatsApp us