ائیرلفٹ پرائیوٹ بس سروس فیل

20 روپے میں کیا بس خرید لی ہے، بھائی آدمیوں کو پیچھے سے چڑھاؤ، عورتوں میں کیوں گھس رہے ہو، جگی ہے نہیں بس چڑھاتے رہو گے ان جملوں سے پریشان ملازمت پیشہ افراد کے لیے ائیر لفٹ نامی پرائیوٹ بس سروس کسی نعمت سے کم نہیں تھی۔ مگر اس نے بھی کراچی میں آنے کے بعد وہی کیا جو کراچی میں آکر ترقی کرنے والا کرتا ہے، دونمبری ، سروس صحیح فراہم نہ کرنا، حال ہی میں ائیر لفٹ کی بس سروس کے حوالے سے کچھ شکایات سامنے آئیں ہیں۔ ویڈیو میں دیکھیے۔۔

اطلاعات کے مطابق مسافروں نے آئی آئی چندریگر روڈ سے گلشن اقبال تک کی رائڈز بک کروائیں۔ انکی مطلوبہ بس وقت سے 20 منٹ کی دیر سے وہاں پہنچی۔ مسافروں کا کہنا ہے کہ بس ابھی چلنا شروع ہی ہوئی تھی اچانک بس کے کلچ نے کام کرنا بند کردیا۔ بس ڈرائیور نے جھٹکے لیتی بس کو بہت مشکل سے صدر کی مارکیٹ میں سائیڈ پر پارک کیا اور کمپنی کو فون کیا جس پر کمپنی کے لوگ اسے باتیں سناتے رہے اور بار بار کال کر کے یہ کہتے کہ کوشش کرو کہ چلاؤ گاڑی۔ ڈرائیور نے انہیں بہت سمجھانے کی کوشش کی مگر وہ سننے کے لیے تیار نہیں تھے باقاعدہ دھمکانے لگے کہ تمہیں ہمارے ساتھ کام کرنا ہے کہ نہیں؟ مسافروں کو انتہائی پریشانی کا سامنا کرنا پڑا۔ اس بس میں موجود خواتین اور حضرات کو اتر کر مجبورا دوسری سواریوں کے لیے بھاگنا پڑا۔ 

شہر کے بے ہنگم ٹریفک نظام میں ان پرائیوٹ بسز کا شامل ہونا ایک اچھا قدم تھا لیکن مسافروں کا کہنا ہے کہ اس کے چارجز بہت زیادہ ہیں، انکے پاس کو کسٹمر سروس ڈیپارٹمنٹ موجود نہیں، آدھا گھنٹہ انتظار کروانے کے بعد بھی انہوں نے مسافروں کے لیے کسی دوسری سواری کا انتظام نہیں کیا۔ 

واضح رہے کہ اس بس سروس کا آغاز کرنے کا خیال چیف ایگزیکٹو عثمان گل کو لوکل بس میں سفر کرنا پڑا جس میں بھیڑ بھاڑ دیکھ کر انہوں نے سوچا کہ وہ اس طرح کی بس سروس شروع کریں گے جس میں مسافروں کو آسانی ہو۔ ابھی اس سروس کا آغاز پاکستان کے دو شہروں لاہور اور کراچی میں کیا گیا ہے۔ 

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

WhatsApp WhatsApp us