مدرسے سے بچے بھاگنے لگے

لاہور مدرسے سے بھاگے ہوئے بچوں کو بھلوال پولیس نے اپنی حراست میں لے لیا تفصیلات کے مطابق بھلوال پولیس کو اطلاع ملی کہ دو نامعلوم بچے اسٹیشن چوک بھلوال میں موجود ہیں جس پر پولیس نے فوری طور پر بچوں کو تحویل میں لے کر جانچ پڑتال کا عمل شروع کردیا کہ آخر یہ بچے کون ہیں اور ان کے ورثاء کو کیسے تلاش کیا جائے ڈی ایس پی بھلوال ملک غلام عباس نے خود ذاتی دلچسپی لیتے ہوئے بچوں سے معلومات لینا شروع کردی اور ایک گھنٹے میں بچوں کے والدین اور گھروں تک پہنچنے میں کامیاب ہوگئے ملنے والے بچوں میں محمد شعیب ولد مشتاق عمر 12 سالہ رہائشی غازی آباد جبکہ دوسرے بچے کا نام عبد العلیم ولد حبیب عمر 11 سالہ رہائش چیچہ وطنی سے ہے دونوں بچے مدرسہ جامعہ مسجد محمدیہ غازی آباد کے طالب علم ہیں دونوں کا کہنا ہے کہ وہ استاد کے تشدد سے تنگ آکر بھاگے ہیں خوش قسمتی تھی خدانخواستہ کوئی بھی ناخوشگوار واقعہ پیش آسکتا تھا  مدارس کے اساتذہ کو چاہئے کہ وہ بچوں سے اساتذہ والا تعلق قائم کریں اور تشدد سے گریز کریں تاکہ بچے تعلیم سے دور نہ بھاگے کیونکہ اگر  اس طرح بچوں پر تشدد کیا جائے گا تو شاید بچے کھبی نہ پڑھ لکھ سکیں آخر کار ہمارے معاشرے میں رہنے والے اساتذہ کو کب عقل آئی گی بچوں سے پیار اور شفقت سے پیش آیا جاتا ہے

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

WhatsApp WhatsApp us