بیوی کی اجازت کے بغیر دوسری شادی

جوڈیشل مجسٹریٹ حماد اللہ بھٹی نے پہلی بیوی سے اجازت لئے بغیر دوسری شادی کرنے والے شخص راشد کو گیارہ ماہ قید اور ڈھائی لاکھ روپے جرمانے کی سزا سنا دی۔پولیس نے اسے کمرہ عدالت سے گرفتار کرلیا۔

واضح رہے کہ گزشتہ ماہ پاکستان کے دارالحکومت اسلام آباد کی اعلیٰ عدالت نے قرار دیا تھا کہ دوسری شادی کے لیے شوہر پر بیوی کی اجازت کے ساتھ محلے کی مصالحتی کونسل سے اجازت لینا بھی لازمی ہو گا ورنہ سزا اور جرمانہ ہو گا۔

اسلام آباد ہائی کورٹ کے چیف جسٹس اطہر من اللہ نے یہ فیصلہ دلشاد بی بی کی درخواست پر سنایا، جس میں انہوں نے اپنے شوہر لیاقت علی میر کے خلاف بغیر اجازت دوسری شادی کرنے پر عدالت سے رجوع کیا تھا۔

عدالتی فیصلے میں یہ بھی کہا گیا تھا کہ مسلم فیملی لاز آرڈیننس 1961 کے مطابق اجازت کے بغیر شادی کرنے والے شخص کو سزا اور جرمانہ ہو گا۔

اسلام آباد ہائی کورٹ کے چیف جسٹس اطہر من اللہ نے اپنے ایک 12 صفحات پر مشتمل فیصلے میں کہا تھا کہ بیوی کی اجازت کے باوجود اگر مصالحتی کونسل انکار کر دے تو دوسری شادی پر سزا ہو گی۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

WhatsApp WhatsApp us