تنہائی اختیار کریں، بورس جانسن

دنیا کے 154 ممالک میں تیزی سے پھیلنے والا کورونا وائرس اب تک 1 لاکھ 69 ہزار 610 افراد کو اپنا شکار بنا چکا ہے۔ اسکے پھیلاؤ کو روکنے کے لیے اٹلی اور اسپین سمیت کئی ممالک میں لاک ڈاؤن بھی کر دیا ہے۔ اس صورت حال کے پیش نظر برطانوی وزیراعظم بورس جانسن نے عوام کو ہدایت کی ہے کہ ہر بیمار شخص کو گھر میں رہنا چاہیے اور پورے گھر کے ارکان کو قرنطینہ یعنی تنہائی میں رہنا چاہئے جبکہ ورکرز گھر سے بیٹھ کر کام کریں۔

گذشتہ روز لندن میں پریس کانفرنس کے دوران برطانوی وزیراعظم بورس جانسن نے کہا اس وقت برطانیہ میں چوالیس ہزار افراد وائرس سے متاثر ہیں۔ سترسال عمر کے لوگوں کو وائرس سے بچنا چاہئے۔ کورونا وائرس بچوں اور بزرگوں کو زیادہ متاثر کرتاہے اور ان کے مرنے کا خطرہ زیادہ ہے۔

واضح رہے کہ چین سمیت دنیا بھر سے 77 ہزار 776 افراد اس وائرس میں مبتلا ہونے کے بعد صحت یاب بھی ہو چکے ہیں جب کہ 6 ہزار کے قریب افراد کی حالت تشویشناک ہے۔

ایک برطانوی اخبار کے مطابق نیشنل ہیلتھ سروسز کے سینئر حکام کو دی گئی ایک خفیہ بریفینگ میں انکشاف کیا گیا کہ 2021 تک اس وبا کے جاری رہنے کی صورت میں کورونا وائرس برطانیہ کی 80 فی صد آبادی کو متاثر کرسکتا ہے جبکہ اس سے قبل برطانیہ کے چیف میڈیکل ایڈوائزر پروفیسر کرس وہٹی یہ تسلیم کرچکے ہیں کہ حالات بدترین صورت اختیار کرگئے تو اس صورت میں آبادی کی اکثریت اس سے متاثر ہوگی۔

برطانیہ میں کورونا کی روک تھام کے لیے قومی حکمت عملی کی تیاری میں شریک این ایچ ایس کے سینئر اہلکار نے اخبار کو بتایا کہ اگر وائرس نے 80 فیصد آبادی کو لپیٹ میں لے لیا تو مرنے والوں کی تعداد پانچ لاکھ سے تجاوز کرنے کا خدشہ ہے۔ لہذا آئندہ 10 سے 14 ہفتوں کو انتہائی اہم قرار دیا گیا ہے۔

یاد رہے کہ برطانیہ میں کورونا سے اب تک 50 ہلاکتیں ہوچکی ہیں اور 1543 کیس رپورٹ ہوئے ہیں۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

WhatsApp WhatsApp us