شائقینِ چکن سوپ کیلئے بری خبر!

کراچی میں جہاں سردی کی آمد کے ساتھ ساتھ مختلف گرم اشیاء کی فروخت میں اضافہ ہوا ہے وہیں غیر منافع خور غیر معیاری اور مضر صحت اشیاء بھی فروخت کر کے سیزن کما رہے ہیں۔ کراچی میں جگہ جگہ ہر گلی کے کونے پر سردیوں میں سوپ والا دیکھائی دیتا ہے۔دوسری جانب صفائی کا فقدان ہونےاور برتن بار بار ایک ہی پانی میں دھونے اورمضر صحت اشیا کی وجہ سے شہریوں میں ہیپا ٹائٹس سمیت دیگر امراض پھیلنے کا خدشہ ہے۔کراچی میں سردی پڑنے پر جہاں چائے اور خشک میوہ جات میں اضافہ ہوا ہے ۔ دوسری جانب کراچی میں گلی کوچوں چوراہوں میں چکن یخنی ،چکن کارن سوپ کے ٹھیلے لگ جاتے ہیں۔چکن کے پنجوں کا سوپ،بڑے جانوروں کی ہڈیوں کا  سوپ اس کے علاوہ اُبلے ہوئے انڈے فروخت کیے جاتے ہیں۔ایل آر نیوز کے ذرائع کے مطابق چکن سوپ فروخت کرنے والے ٹھیلے پتھاروں پر اسٹیل کے تسلے کے اوپر ایک سالم ابلی ہوئی مرغی لٹکا دی جاتی ہے اور یہ دیکھانے کی کوشش کی جاتی ہے  یہ مرغی کا سوپ ہے۔بعض ٹھیلے والے اس مرغی کے ٹکڑے کر کے اسپیشل ریٹ میں فروخت کرتے ہیں۔بعض ٹھیلے والے مرغی کو بار بار سوپ میں ڈال کر تازہ کرتے ہیں۔چکن کی یخنی میں چکن کے گوشت کے ساتھ ساتھ اس میں پوٹے،کلیجی اور ہڈیاں بھی ڈال دی جاتی ہیں۔ یہ صرف اس وجہ سے ڈالتے ہیں تاکہ اس میں مرغی کے گوشت کا ذائقہ  آجائے اور پھر اسے مہنگے داموں فروخت کیا جاتا ہے

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

WhatsApp WhatsApp us